154

25 جولائی کو سردار امجد یوسف کو ووٹ دیں، بلاول بھٹو زرداری کا عباس پور میں جلسہ عام سے خطاب

چئرمین پاکستان پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری نے کالج گراؤنڈ عباس پور میں منعقدہ انتخابی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سردار امجد یوسف کی جیت یقینی ہے۔ حلقہ کی عوام نے آج ثابت کردیا کہ پیپلزپارٹی آزادکشمیر میں حکومت بنائے گی۔ کشمیر کے لوگوں نے بے نظیر بھٹو کا ساتھ دے کر تاریخ رقم کی تھی۔ 25 جولائی کو کشمیر میں کامیابی کے بعد اسلام آباد کا رخ کریں گے اور کٹھ پتلی حکومت کو گھر بحجیں گے۔ اپنے ووٹ کے ذریعے بارڈر کے دونوں طرف یہ پیغام دیں گے کشمیر کا سودا نا منظور ہے۔ ہم مودی کی جیت کی دعا نہیں مانگتے اور نہ ہی ان کو اپنی شادیوں پر دعوت دیتے ہیں۔ ہم برداشت نہیں کر سکتے کہ مودی تاریخی حملہ کرے تو ہمارے کٹھ پتلی وزیراعظم خاموش رہے۔ پوری دنیا کو ماننا پڑے گا کہ اس خطے کے عوام ہی اس کے مستقبل کا فیصلہ کریں گئے کشمیری حکم کریں کہ جنگ ہونی چاہیے تو جنگ ہو گی۔ 70 سال سے جدوجہد کرنے والے کشمیری کسی کی ڈکٹٹیشن نہیں مانتے، کشمیریوں کی بات نئی دہلی اور اسلام آباد دونوں کو ماننا پڑے گی۔ کٹھ پتلی نے غریب عوام کا خون چوسا، پورے پاکستان کو معاشی بحران کو دھکیل دیا ہے۔ تبدیلی کا اصل چہرہ تو بے روزگاری، مہنگائی اور غربت ہے، مہنگائی میں ہم بنگلہ دیش اور جنگ زدہ افغانستان سے بھی آگے ہیں۔ یہ کس قسم کی سیاست ہے کہ 50 لاکھ گھر بنانے کا وعدہ کر کے لوگوں سے ان کے چھت بھی چھین لیے گئے ۔بلاول بھٹو زرداری نے واضح کرتے ہوئے کہا کہ پی ڈی ایم اس حکومت کو چلانا چاہتی ہے۔ وہ کہتے تھے کہ آر اور پار ہو گا، اب وزیر اعظم بننے کے لیے پاؤں پکڑ رہے ہیں۔ آپ حکومت کو نہیں گرانا چاہتے تو گھر بیٹھ جاؤ ہم بزدار کو بھی بگھائیں گے اور عمران کو بھی بگھائیں گے۔ ہمارے دوست چاہیتے تھے کہ بائی الیکشن ہو رہے ہوں تو ہم عمران خان کو تحفے میں سیٹ دیں ۔ہم نے عمران خان کو شکست دی تو ہمارے دوست ہم سے لڑ پڑے کہ آپ نے یہ کیوں کیا ہم نے انہیں گرانا تھا۔ امید ہے کہ مولانا صاحب اپنے 4 ممبران کو پکڑیں گے جو اس دن غائب تھے۔ حکومت کو اوپن فیلڈ دینا باقی جماعتوں کی سیاست ہو سکتی ہے پیپلز پارٹی ایسا نہیں کر سکتی۔ آپ نے اگر سیاسی اتحاد اس لیے بنائے کہ آپ نے حلوہ اور نہاری کھانی ہے ہم ایسے سیاسی اتحاد کا حصہ نہیں ہوں گے۔ خود کو کشمیر کا سفیر کہنے والے عمران خان رات کے اندھیرے میں آرڈیننس نکالا تو معلوم ہوا یہ سفیر نہیں کلبھوشن کے وکیل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میرے ساتھ وعدہ کریں کہ آپ 25 جولائی کو تیر کو ووٹ دیں گے۔ جلسہ عام سے سابق وزیر امورکشمیر قمر الزمان کائرہ، سابق صدر آزادکشمیر سردار محمد یعقوب خان، امیدوار اسمبلی سردار امجد یوسف، نبیلہ ایڈووکیٹ سمیت دیگر نے خطاب کیا۔



اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں